Home / History / Ghazi Ilam deen Shaheed

Ghazi Ilam deen Shaheed

g

 

“ترکھاناں دا منڈا”

عام خاموش طبع سا نوجوان ہی تو تھا !
اپنے کام سے کام رکھتا ،لکڑی کاٹنا،چھیلنا اس سے مختلف چیزیں بنانا اور بیچ کر اپنا روزگار کمانا
کیا نظریہ؟
کون سا اصول؟
کیا فلسفہ ؟
کیسی دانشوری؟
صبح ہوتی تھی شام ہوتی تھی زندگی یوں ہی تمام ہوتی تھی
مگر اس غم روز گار میں لگے نوجوان کی نہ جانے کیا ادا پسند آ گئی؟ نہ معلوم کون سی نیکی کام آئی کہ ایک سے ایک جبہ و دستار پہنے لفظوں کے کشتوں کے پشتے لگاتے، جھاگ آڑاتے قال اللہ اور قال الرسول کی صدائیں بلند کرتے سب کے سب دیکھتے رہ گئے اور “ترکھانا دا منڈا” بازی لے گیا
وہ آج ہی کی تاریخ تھی جب وہ عام سا لڑکا اللہ کے رسول کی جناب میں پیش کیا گیا ہو گا اپنے نبی کے مقام کی حفاظت کے لئے جب وہ جان کا نذرانہ لے کر پیش ہوا ہو گا تو فرشتوں نے اس پر پھول برسائے ہوں گے حوریں قطار باندھے اس شہزادے کی عزت افزائی کو کنیزیں بن کر کھڑی ہوئی ہوں گی اور جب اسے میرے نبی کی قدم بوسی کو پیش ہونے کا موقعہ ملا ہو گا تو مجھےیقین ہےکہ نبی مہربان نے اسے بازوں میں لے کر سینے سے لگا لیا ہوگا ماتھا چوم کر اپنے پاس بٹھایا ہو گااور فخر سے اردگرد بیٹھے لوگوں سے اس کا تعارف کروایا ہو گا۔۔۔
یہ شرف بس اللہ کی توفیق ہی سے حاصل ہوتا ہے اور غازی علم دین نے یہ شرف پا لیا۔۔۔
اے اللہ
سعادت کی زندگی
شہادت کی موت

خود کلامی۔۔۔زبیر منصوری

Must Read .

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *